کرونا نے ٹرمپ کی پوزیشن کمزور کردی، برنی سینڈر،براک اوباما نے جوبائیڈن کی حمایت کردی

امریکی ڈیموکریٹ پارٹی کے امیدوار جو بائیڈن کو سابق امریکی صدر اور ڈیموکریٹ پارٹی کے اہم رکن بارک اوباما کی حمایت حاصل ہوگئی ہے

جوبائیڈن کی حمایت کرتے ہوئے انہوں نے ایک ویڈیو میں کہا کہ جو بائیڈن کو انہوں نے اپنا نائب صدر مقرر کیا تھا جو ایک بہترین فیصلہ ثابت ہوا۔برنی سینڈر ایک روز قبل جوبائیڈن کی حمایت کرچکے ہیں۔ برنی سینڈر کا صدارتی امیدوار منتخب ہونے کے لیئے سخت مقابلہ جوبائیڈن کے ساتھ رہا۔ سوشلسٹ نظریات کے حامی سینڈر کو بالآخر امریکی سرمایہ دارانہ کلاس نے قابو کرلیا اور جو بائیڈن کو پرو اسٹیبلشمنٹ ڈیمو کریٹ نے کئی ریاستوں میں ڈیموکریٹ امیدواروں میں جاری مقابلے میں برتری دلادی۔جس کے بعد سینڈر کو اپنی مہم ختم کرنا پڑی۔

برنی سینڈر اور بارک اوباما کی سپورٹ کے بعد اب جو بائیڈن ڈیموکریٹ پارٹی کی طرف سے ٹرمپ کے مقابلے پر امیدوار ہیں۔ نومبر میں ہونے والے انتخابات میں دونوں کے درمیان کانٹے کا مقابلہ دیکھا جاسکتا ہے۔ ٹرمپ کو عمومی طور پر مضبوط امیدوار سمجھا جارہا تھا لیکن کرونا وائرس میں لاک ڈاون کے معاملے اور کئی ہزارہلاکتوں نے ٹرمپ کی مقبولیت کو جھٹکا پہنچایا ہے۔ٹرمپ صحت بجٹ میں کمی کے حامی رہے ہیں اور اپنے دور حکومت میں اس میں کمی کی ہے۔ ڈیموکریٹ پارٹی کے ارکان اور ووٹرز سمجھتے ہیں کہ ٹرمپ کی پالیسی کی وجہ سے صحت کا شعبہ مالی طور پر مضبوط نہ ہوا اور کرونا وائرس کی وبا میں بہت زیادہ ہلاکتوں کا باعث بنا۔ صرف چودہ اپریل کو دوہزار سے زائد افراد امریکا میں کرونا وائرس کی وجہ سے انتقال کرگئے۔ یہ تعداد نائن الیون کے سانحہ میں مرنے والوں سے بھی کہیں زیادہ تھی۔

صحت کے شعبہ کو لیکر آنے والے انتخابات میں ریپبلکن پارٹی کو شدید مشکلات کا سامنا ہے۔ ڈیموکریٹ پارٹی اس وقت پراعتماد ہے کہ وہ ٹرمپ کو ہراسکتے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں