امریکہ میں زیر تعلیم غیر ملکی طلبہ کو ریلیف مل گیا، امریکی حکومت نئی پالیسی واپس لینے پر تیار

مانیٹرنگ ڈیسک: امریکا میں تعلیم حاصل کرنے والے کسی بھی غیر ملکی طالبعلم کو اب ڈیپورٹ نہیں کیا جائے گا۔ ٹرمپ انتظامیہ نے نئی پالیسی ختم کرنے پر رضامندی ظاہر کردی ہے

ٹرمپ انتظامیہ اور ہارورڈ اور ایم آئی ٹی سمیت متعدد یونیورسٹیزکے درمیان نئی پالیسی واپس لینے کی ڈیل ہوگئی ہے۔ نئی پالیسی کے تحت جن طلبہ کی تمام کلاسسز آن لائن ہورہی تھیں انہیں فوری طور پر امریکا چھوڑنے کی ہدایت کی گئی تھی۔ اس پالیسی کے خلاف ہارورڈ سمیت کئی امریکی یونیورسٹیز نے عدالت میں امریکی حکومت پر مقدمہ دائر کیا تھا۔

اب امریکی ڈاٹرک جج نے اعلان کیا ہے کہ امریکی انتظامیہ پالیسی واپس لینے پر رضامند ہوگئی ہے

امریکی انتظامیہ نے غیر ملکی طلبہ کے خلاف امیگریشن فورس آئس استعمال کرنے کا فیصلہ کیا تھا۔ نئی پالیسی کے تحت غیر ملکی طلبہ کو کم از کم ایک کورس آن کیمپس لینا تھا اگر تمام کورسسز آن لائن ہوتے تو انہیں ڈیپورٹ کردیا جاتا

نئی ڈیل کے بعد غیر ملکی طلبہ کو بڑا ریلیف مل گیا ہے اور وہ اب ڈیپورٹ کی لٹکتی تلوار سے بچ گئے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں