آسٹریلیا میں ہزاروں افراد کا مظاہرہ، نسلی تعصب ختم کرنے کا مطالبہ

مانیٹرنگ ڈیسک: آسٹریلیا میں نسل پرستی کے خلاف ہزاروں افراد سڑکوں پر نکل آئے۔ آسٹریلیا کے اصل باشندے جنہیں ایبروجینی کہتے وہ اس مظاہرے میں بڑی تعداد میں شریک ہیں جو اپنے ساتھ برتے جانے والے پولیس تعصب کے خلاف مظاہرہ کررہے ہیں

آسٹریلیا میں یہ مظاہرے ایک سیاہ فام امریکی ہلاکت کے بعد دنیا بھر میں نسلی تعصب کے خلاف مظاہروں کا تسلسل ہیں۔اس مظاہرے میں فرق اتنا ہےکہ آسٹریلیا میں مظاہرہ کرنے والے سیافام افراد نہیں ہیں بلکہ وہ مقامی لوگ ہیں جو سفید فام برطانوی شہریوں کی آمد سے پہلے اس براعظم پر رہتے تھے۔ ایبروجینیز کا کہنا ہے کہ ان کے ساتھ وہی سلوک کیا جاتا ہے جو امریکا میں سیاہ فام افراد کے ساتھ کیا جاتا ہے

آسٹریلیا کے شہروں سڈنی، میلبورن، برسبن، ایڈلیڈمیں پرامن مظاہرہ کررہے ہیں۔ نیو ساوتھ ویلز کی عدالت نے اس مظاہرے کو قانونی قرار دیا ہے اس سے پہلے پولیس اس مظاہرے کو روکنا چاہتی تھی۔پولیس کی رائے تھی کہ ایک محدود تعداد میں لوگ اس مظاہرے میں شریک ہوں۔ پولیس کا موقف تھا کہ یہ پالیسی کرونا وائرس کی وجہ سے اپنائی گئی تھی۔ لیکن مظاہرین نے اسے ماننے سے انکار کیا۔ بعد میں معاملہ عدالت میں چلا گیا۔ جہاں سے مظاہرے کی اجازت مل گئی۔

ٹوئٹر پر مظاہروں کی فوٹیج مسلسل اپ لوڈ کی جارہی ہے

آسٹریلیا کے نیوز چینلز مظاہروں کی لائیو کوریج کررہے ہیں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں