اے کے ڈی اور بینک اسلامی میں کںٹرول کی لڑائی

کراچی (مارکیٹ رپورٹرٌ): پاکستانی اسٹاک مارکیٹ کا بڑا نام اے کے ڈی سیکوریٹیز اور بینک اسلامی کے درمیان کنٹرول کی جنگ اسوقت شروع ہوئی جب اے کے ڈی نے بینک اسلامی کی سبسڈی بی آئی پی ایل سیکوریٹیز کی خریداری میں دلچسپی ظاہر کی۔ لیکن اے کے ڈی کی اس کوشش میں بینک اسلامی نے اسوقت مسائل کھڑے کردئے جب اے کے ڈی سیکوریٹیز کی طرف سے اکاوئنٹ کی جانچ پڑتال کی درخواست کو قبول نہیں کیا

اے کے ڈی سیکوریٹیز نے بی آئی پی ایل سیکوریٹیز کے 77.12پیڈ اپ اور ایشو شیئرز بمعہ مینجمنٹ کے خریداری میں دلچسپی ظاہر کی جس کے لیئے کھاتوں کی جانچ پڑتال کی درخواست دی۔ تاہم بینک اسلامی نے وجوہات کی بنا پر یہ درخواست 8اپریل کو مسترد کردی۔ جس کے بعد اے کے ڈی سیکوریٹیز نے سیکوریٹیز اینڈ ایکسچینج کمیشن سے شکایت کی۔ سیکوریٹیز اینڈ ایکس چینج کمیشن نے 5 مئی کو بینک اسلامی کو ہدایت کی کہ خریداری کی خواہش کرنے کے بعد اے کے ڈی کو کھاتوں کی جانچ پڑتال کی اجازت دی جائے ۔ کمیشن کے اس حکم کے بعد آج بینک اسلامی نے اسٹاک مارکیٹ کو بتایا کہ اے کے ڈی سیکوریٹیز کی کھاتوں کی جانچ پڑتال کے درخواست قبول کرلی گئی ہے اور ڈیٹا روم ان کے لیئے کھول دیا جائے گا

اگرچہ بینک اسلامی نے ریگولیٹرز کے فیصلے کو مانتے ہوئے اے کے ڈی سیکوریٹیز کے لیئے دروازے کھولے ہیں لیکن صورتحال سے لگتا ہے کہ ابھی یہ لڑائی ختم نہیں ہوئی ہے۔ بینک اسلامی نے اپنے نئے خط میں اے کے ڈی سیکوریٹیز پر اٹھائے گئےا عتراضات تو نہیں بتائے لیکن یہ واضع کردیا کہ یہ اجازت صرف کمیشن کے حکم پر دی جارہی ہے۔ جس کا مطلب ہے کہ اعتراضات اب بھی ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں