پی آئی اے انتظامیہ نے پائلٹوں کی ایسوسی ایشنوں کو غیر قانونی قرار دیکر معاہدے ختم کردیئے

پی آئی اے انتظامیہ پائلٹس ایسوسی ایشنوں سمیت تمام ایسوسی ایشنوں کو غیر قانونی قراردیکر ان سے کیئے گئے تمام معاہدے منسوخ کردیئے ہیں۔ پی آئی اے ترجمان کا کہنا ہےصرف ریفرنڈم سے منتخب ہونے والی سی بی اے کی حیثیت قانونی ہوگی اور پی آئی اے انتظامیہ انہی سے بات کرے گی

پی آئی اے نے یہ فیصلہ ایسے وقت پر کیا ہے جب پی آئی اے کو امریکا کے لیئے براہ راست پروازیں چلانے کی اجازت مل گئی ہے۔ امریکی محکمہ ٹرانسپورٹ میں ہر ہفتے پی آئی اے کو گیارہ پروازیں چلانے کی اجازت دی ہے۔پی آئی اے کی انٹرنیشنل فلائٹس پر پائلٹ اور جہاز کےدیگر عملے کی ایسوسی ایشنوں کا دباو ہوتا ہے ۔ ماضی میں بھی من پسند افراد کو زیادہ انٹرنیشنل فلائٹس دینے کی شکایات میڈیا میں آتی رہی ہیں ۔

پی آئی اے میں پائلٹس ایسوسی ایشن پالپا مضبوط ترین ایسوسی ایشن سمجھی جاتی ہے۔ اس کی کال پر پائلٹ ہڑتال کرتے ہیں ۔ اس کےعلاوہ دیگر ایسوسی ایشن جیسے سالسا بھی متحرک ہیں جو مختلیف ملازمین کی نمائندگی کرتی ہیں۔ اس کے علاوہ ریفرنڈم کے بعد ایک سی بی اے بھی منتخب ہوتی ہے ۔ اس سے پہلے پی آئی اے انتظامیہ مختلیف ایسوسی ایشنوں سے معاہدے کرتی تھی جس میں اسٹاف کی ڈیوٹی طریقہ کار تک کے معاہدے شامل تھے۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں