اٹھارویں ترمیم میں خامیاں ہیں، مشترکہ مفادات کونسل کا سیکریٹریٹ بنانے کا فیصلہ، اسد عمر

وفاقی وزیر برائے منصوبہ بندی اسد عمر کا کہنا ہے کہ 18 ویں ترمیم میں کچھ خامیاں نظر آئی ہیں جنہیں مل اپوزیشن سے مل کر درست کیا جاسکتا ہے۔ انہوں نے جیو نیوز کے پروگرام میں بات کرتے ہوئے کہا کہ اٹھارویں ترمیم کے تحت مشترکہ مفادات کونسل کا سیکریٹریٹ بننا تھا لیکن پیپلز پارٹی اور ن لیگ کی حکومتوں نے یہ سیکریٹریٹ نہیں بنایا۔ انہوں نے کہ پی ٹی آئی حکومت نے یہ سیکریٹریٹ بنانے کا فیصلہ کیا ہے۔ اسد عمر کا کہنا تھا کہ اٹھارویں ترمیم کے بعد صوبائی حکومتوں تک تو اختیارات پہنچ گئے لیکن صوبوں سے اختیارات مقامی حکومتوں کو نہیں مل سکے۔ انہوں نے کہا کہ اٹھارویں ترمیم میں خامیوں پر تمام سیاسی جماعتیں اس پر بیٹھ کر بات کرسکتی ہیں۔ اسد عمر کا کہنا تھا کہ نیب آرڈیننس پر دومیٹنگ ہوچکی ہیں جس میں اپوزیشن کے ارکان بھی شامل تھے ۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں